فرقت کے خاموش لمحوں می


فرقت کے خاموش لمحوں میں
تم اکثر چپکے سے چلے آتے ہو
خیال بن کر دل پہ چھائے رہتے ہو
مگر خوابوں میں جو کبھی ہوا تکلم
تو عکس بن کر پھسل جاتے ہو
نور بن کر آنکھوں کی آغوش میں رہتے ہو
کبھی احساس بن کر چند لفظوں میں سمٹ جاتے ہو
پھر کچھ یوں میری تنہا ئیوں کو بانٹ لیتے ہو
پاس نہ ہو کر بھی حواسوں پر چھائے رہتے ہو
بتاؤ اتنے قریب رہ کر بھی کیوں فاصلوں کی بندش میں رہتے ہو

(Written By Sidra Choudhry)
This entry was posted in Poetry. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s