ساقی شراب لا کہ طبیعت اداس ہے

ساقی شراب لا کہ طبیعت اداس ہے
 مطرب رباب اٹھا کہ طبیعت اداس ہے
 چبھتی ہے قلب و جاں میں ستاروں کی روشنی

اے چاند ڈوب جا کہ طبیعت اداس ہے
 شاید ترے لبوں کی چٹک سے ہو جی بحال
اے دوست مسکرا کہ طبیعت اداس ہے
 ہے حسن کا فسوں بھی علاج فسردگی
 رُخ سے نقاب اٹھا کہ طبیعت اداس ہے
 میں نے کبھی یہ ضد تو نہیں کی پر آج شب
 اے مہ جبیں نہ جا کہ طبیعت اداس ہے
 توبہ تو کر چکا ہوں مگر پھر بھی اے عدم
 تھوڑا سا زہر لا کہ طبیعت اداس ہے
This entry was posted in Poetry. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s